جمعہ, مئی 24, 2024
spot_img
ہومخبریںتربت: عالمی یومِ تشدد کے موقع پر ایچ آر سی پی کے...

تربت: عالمی یومِ تشدد کے موقع پر ایچ آر سی پی کے زیر اہتمام تقریب کا انعقاد، لاپتہ افراد کی بازیابی اور تشدد کے خاتمے کیلئے قرارداد پیش کیاگیا۔

ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان کے زیراہتمام 26 جون کو تشدد کے شکار افراد سے اظہار یکجہتی کی مناسبت سے تقریب کا انعقاد کیاگیا۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ایچ آر سی پی مکران ریجن کے کوارڈینیٹر واجہ غنی پرواز نے کہاکہ ہرسال اقوام متحدہ کی جانب اس دن کو منایا جاتا ہے، اس دن کو منانے کا مقصد تشدد کے شکار افراد سے اظہار یکجہتی کرنا ہے۔ تشدد کی تاریخ انتہائی قدیم ہے تشدد کی ابتداء دس لاکھ سال قبل ہوامائیٹ اینڈ رائیٹ نامی شخص نے تشدد کا آغاز کیا، ابتدائی دور میں آقا اور غلام اور طاقتور نے کمزور پر تشدد کرنا شروع کیا۔ ابتداء میں چودھویں صدی میں امیر تیمور کے زمانے میں پہلی بار تشدد خانہ اور ٹارچر سیل قائم کیے گئے۔ ستارھویں صدی میں تشدد کیخلاف جدوجہد کا آغاز کیا گیا اور اسکے خلاف مزاحمت کیا۔ بیسیوں صدی میں اقوام متحدہ نے1977 میں انسانی حقوق کے ادارے نے جینیوا کانفرنس کے دوران یہ فیصلہ کیا کہ عالمی سطح پر تشدد کیخلاف عالمی دن منایا جائے۔ پہلی بار 1998میں اس دن کو مقرر کیا گیا اور 26جون کو پہلی بار عالمی طور پر اس دن کو منایا گیا۔

انہوں نے تشدد کی تعریف بیان کرتے ہوئے کہاکہ انسان کو مادی یا غیر مادی صورت میں تکلیف دینا تشدد کہلاتاہے، جسمانی تشدد کو وائیلنس کہا جاتا ہے جبکہ ٹارچر زہنی تشدد کو کہا جاتا ہے، لیکن بعض مفکرین نے اسے ایک کردیاہے۔ تشدد کرنے والوں کے کچھ مقاصد ہوتے ہیں جن میں پہلا مقصد تشدد کرنے والے کو جرم کا اعتراف کرانا، اسی طرح دوسروں کے بارے میں معلومات حاصل کرنے کیلئے بھی تشدد کیا جاتاہے، جبکہ جرائم کی روک تھام کیلئے بھی تشدد کیا جاتاہے۔ تعلیمی اداروں میں بھی تشدد کیاجاتاہے، دھمکی دینا بھی تشدد کے زمرے میں آتاہے، ریاستی سطح پر بھی مختلف ادارے تشدد کرتے ہیں عوام پر جو بہت عام ہے لوگوں کو اٹھانا غائب کرنا مسخ شدہ لاش بناکر پھینکنا، بلاوجہ روک کر پوچھ گچھ کرنا، مغربی ممالک میں خواتین مردوں پر تشدد کرتے ہیں،ریپ بھی تشدد کا ایک قسم ہے،جسمانی، جنسی، زہنی تشدد ایم عناصرہیں۔

انہوں نے کہاکہ تشدد کے ذریعے جرائم کا خاتمہ ممکن نہیں بلکہ اصلاحی تحریک، روزگار، بنیادی حقوق دینا، تعلیم دینا اور دیگر مواقع پیدا کرنا تشدد سے زیادہ کارگرد ثابت ہونگے۔ انہوں نے کہاکہ ایچ آر سی پی ہرقسم کے تشدد کا خلاف ہے۔

سیاسی رہنماء و انسانی حقوق کے کارکن خان محمدجان گچکی نے کہاکہ تشدد کے مختلف اقسام ہیں، جن میں گھریلو تشدد، سیاسی کارکنان پر تشدد، صحافیوں پر تشدد سمیت دیگر اقسام ہیں۔ مجاھد بلوچ نے کہاکہ تشدد کیلئے دنیا میں مختلف اقسام ہیں، مقتدر قوتیں جب لوگوں کو اغوا کرتے ہیں تو ان پر تشدد کرنے کیلئے مختلف طریقے استعمال کیے جاتے ہیں جن میں واش روم کے اندر کیڑے مکوڑوں کیساتھ رکھنا، زیادتی کا نشانہ بنانا، اور مختلف طریقے آزمائے جاتے ہیں۔ ایچ آرسی پی کے کارکن محمدکریم گچکی نے کہاکہ تشدد کے شکار افراد سے اظہار یکجہتی کا دن منایا جاتاہے مگر انکے اوپر ہونے والے تشد کی روک تھام کیلئے عملی اقدامات اٹھانے سے قاصر ہیں، انسانوں کو بنیادی ضروریات پانی وبجلی کیلئے بھی ترسانا تشدد کے اقسام میں سے ہے جسکے ہم شکار ہیں، آئے روز لوگوں کو بلاوجہ روکنا، جبری طو رپر اٹھانا یہ تشدد کے زمرے میں آتےہیں، حتیٰ کہ لوگوں کو پارٹیاں بدلنے کیلئے بھی تشدد کا نشانہ بنایا جاتاہے، ریاستی سطح پر تشدد کرنے والے گروہوں کی سرپرستی کی جاتی ہے۔

شہناز شبیر نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہاکہ گھریلو معاشرے میں ہمارے خواتین و بچے سمیت مرد بھی تشدد کا شکار ہیں کیونکہ بعض دفعہ ایسی خواتین دیکھنے کو ملتی ہیں جو مرد کی بات نہیں مانتے اور اسے بطور شوہر تسلیم نہیں کرتے یہ بھی تشدد ہے۔ معروف ایڈووکیٹ روستم گچکی نے کہاکہ طاقتور طبقے ہمیشہ اپنی بالادستی قائم کرنے کیلئے تشدد کاراستہ اختیار کرتے ہیں۔ ایڈوکیٹ عبدالمجید دشتی نے کہاکہ تشدد کی روک تھام تب ممکن ہوگا جب ملک میں حقیقی آئین و قانون کا بالادستی قائم ہوگی۔

پروگرام میں مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والے افراد شریک تھے جن میں بشیر دانش، شگراللہ یوسف، یلان بلوچ، حمل امین، یاسر بلوچ، جمال پیرمحمد، راجہ احمدخان گچکی، جمشید پرواز، منورعلی رٹہ، سجاد بلوچ، زمان خورشید سمیت دیگر شریک تھے۔ اس موقع پر پروگرام کے کوارڈینیٹر وقار بلوچ نے پروگرام کی نظامت کے فرائض سرانجام دیئے۔

پروگرام میں ایک قرار داد پیش کیاگیا جن میں آپسر کیچ سے اٹھائے گئے خواتین کے اغوا کی مذمت کرتاہے، دوہزار سے آج تک 60 ہزار بلوچوں کو لاپتہ کیاگیا جسکی مذمت کرتے ہیں۔ جو غیرآئینی غیر قانونی اور وحشتناک عمل ہے لہذا تمام لاپتہ افرادکی بازیابی کا مطالبہ کیا جاتاہے۔ یہ مطالبہ بھی کیا جاتاہے کہ یہ سلسلہ بند کیا جائے۔ پروگرام مطالبہ کرتی ہے کہ بلوچ سمیت دیگر اقوام پر تشدد کا سلسلہ بند کیا جائے۔ قرار داد میں مطالبہ کیاگیا کہ ایران کی جانب بجلی مکران کو فرہم کیا جاتاہے مگر باوجود اسکے عوام کو نہیں مل رہی ہے، پروگرام واپڈا کے رویے کی مذمت کرتی ہے جس سے لوگ تشدد کا شکار ہیں۔ واپڈا سے مطالبہ کیاجاتاہے کہ عوام کو بجلی فراہم کرکے نارمل بل وصول کیاجائے اور بقایاجات معاف کرکے مکران کو آفت زدہ قرار دیاجائے۔ سویلین افراد کو فوجی عدالتوں کے ذریعے سزا دینا منظور نہیں اسکا فی الفور خاتمہ کیاجائے۔

پروگرام کےاختتام پر تشدد کیخلاف ایک مظاہرہ کیاگیا جہاں مظاہرین نے مختلف پلے کارڈز اٹھائے رکھے تھے جن پر تشدد کیخلاف مختلف نعرے درج تھے۔

متعلقہ مضامین

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

تازہ ترین