اتوار, مئی 26, 2024
spot_img
ہومبلوچستانتربت: شہید ڈاکٹر یاسین بلوچ کی برسی پر نیشنل پارٹی کا تربت...

تربت: شہید ڈاکٹر یاسین بلوچ کی برسی پر نیشنل پارٹی کا تربت میں جلسہ عام، ڈرگ مافیا، ٹوکن مافیا اور لینڈ مافیا کو عبرت کا نشان بنانے کا عزم

نیشنل پارٹی کیچ کے زیراہتمام شہید ڈاکٹر یاسین بلوچ کی آٹھویں برسی کے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی صدر ڈاکٹر عبدالمالک بلوچ اور مرکزی سکریٹری جنرل جان محمد بلیدی نے شہید ڈاکٹر یاسین بلوچ کو سیاسی اور قومی جدوجہد میں ہراول دستے کا کردار ادا کرنے پر خراج عقیدت پیش کیا، ڈاکٹر یاسین بلوچ ایک سنجیدہ، بے لوث قومی رہنما تھے سیاسی عمل میں مضبوط سیاسی کمیٹمنٹ، مسلسل رابطہ کار اور نہ تھکنے والے رہنما تھے۔ بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن میں ان کے کردار کو فراموش نہیں کیا جاسکتا ہے بی ایس او اور بی این ایم بحران میں ان کے قائدانہ کردار کو ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔ انھوں نے کھاکہ جنرل مشرف رجیم اور اس کے باقیات نے 2002 سے 2013 تک بلوچستان کو آگ اور خون میں دکھیل دیا۔ بلوچستان میں تباہی و بربادی کے اصل زمہ دار یہی حکمران تھے رہی سہی کثر 2018 کے دھاندلی زدہ انتخابات نے پورا کردیا بلوچستان سمیت پورے ملک کو تباہی کے دہانے پر پہنچا دیا۔ بلوچستان میں کرپشن اور اقربا پروری کے رکارڈ بنائے گئے نوکریاں برائے فروخت تھے ترقیاتی اسکیمات کے تمام فنڈز ھڑپ کردیے گئے۔ زرعی بندات پر تاریخی کرپشن کی گئی روڈ سیکٹر کے تمام اسکیمات اپنوں میں بانٹ دیے گئے۔ تربت فیز ٹو اور تری کا نام و نشان نہیں ہے بلیدہ سٹی پروجیکٹ میں ایک کلو میٹر پکی روڈ نہیں نظر آرہا ہے پانچ ارب کہاں گئے کسی کو معلوم نہیں مکران میڈیکل ہسپتال زمیں سے باہر آنے کا نام ہی نہیں لے رہا ہے تربت یونیورسٹی کرپشن کی آماجگاہ بنا ہے کوئی پوچھنے والا نہیں ہے ٹوکن مافیا نے بارڈر کو تباہ کردیا لینڈ مافیا نے تربت کے اور بلوچستان کے بیشتر اضلاح میں سرکاری اراضیات اپنے نام کردیے تربت میں قبرستانوں کے زمینوں پر بھی قبضہ کیا گیا۔

انھوں نے کھاکہ یہی حکمران ٹولہ ابھی چور دروازے کی تلاش میں اسلام آباد اور کوئٹہ میں سرگرداں ہے عوامی مینڈیٹ پر قبضہ کرنے کے تراکیب میں لگا ہے لیکن یہ ان کی بھول ہے نیشنل پارٹی کے کارکن اس بار ڈرگ مافیا، ٹوکن مافیا اور لینڈ مافیا کو عبرت کا نشان بنائیں گے اور ان سے قومی دولت کا ایک ایک روپے کا حساب لیا جائے گا۔ نیشنل پارٹی بلوچستان بھر سے عوامی مینڈیٹ حاصل کرکے بلوچستان کے قومی و سیاسی مسائل حل کرئے گا۔ بلوچستان کا مسئلہ قومی ہے اور قومی مفاہمتی پالیسی کے تحت بلوچستان کے سیاسی مسائل کے حل کی حکمت عملی پر کام کیا جائے گا۔ نوجوانوں کے تعلیم اور روزگار کو یقینی بنایا جائے گا۔ لاپتہ افراد کی بازیابی نیشنل پارٹی کی ترجہات میں شامل ہے امن و امان کی صورتحال کو بہتر کرکے لوگوں کے تحفظ کو یقینی بنایا جائے گا۔ انھوں نے کھاکہ صاف و شفاف انتخابات ملک کی معاشی ترقی کے لیے ضروری ہے۔ عوام دشمن و قوم و وطن دشمن قوتوں کو عوام کی طاقت سے عبرتناک شکست سے دوچار کرینگے۔

جلسہ سے سینٹر محمد اکرم دشتی، واجہ ابوالحسن، بی ایس او کے چیرمین بوھیر صالح، جسٹس ریٹائر شکیل احمد بلوچ، طاہرہ خورشید ، عبدالغفور ہوت، عابد سہرابی، فداحسین دشتی، منصور بلوچ، ناظمالدین، ڈاکٹر نور بلوچ، رجب یاسین، مشکور بلوچ، آدم قادر بخش، حلیم بلوچ، فضل بلوچ اور دیگر نے خطاب کیا۔ جلسہ میں خواتین کی ایک بڑی تعداد کے علاوہ بلیدہ، زامران، کولواہ، ہوشاپ، دشت، مند، تمپ ، بالیچہ، ابسر تربت، سری کہن کلگ، کلاتک، جوسک اور دیگر علاقوں سے کارکنوں کی بڑی تعداد بھی موجود تھا۔

متعلقہ مضامین

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

تازہ ترین