پیر, جون 24, 2024
spot_img
ہومبلوچستانتربت: بلیدہ زامران سے لاپتہ افراد کے لواحقین کا دھرنا ڈی سی...

تربت: بلیدہ زامران سے لاپتہ افراد کے لواحقین کا دھرنا ڈی سی آفس تربت کے باہر دوسرے روز میں داخل

بلیدہ زامران سے لاپتہ افراد کے لواحقین کا دھرنا ڈی سی آفس تربت کے سامنے دوسرے روز میں داخل، انتظامیہ سمیت اعلی حکام نے ابھی تک باقاعدگی سے مزاکرات نہیں کیا ہے۔

دھرنے میں بلیدہ زامران کے علاوہ ضلع کیچ کے مختلف علاقوں سے تعلق رکھنے والے افراد کے لواحقین پیاروں کی بازیابی کیلئے دھرنے میں شامل ہوگئے۔

دھرنے سے بلیدہ سے لاپتہ مسلم عارف کی بہن نورجان عارف نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ انکے بھائی کو گزشتہ سال جون کے مہینے میں اٹھایا گیا تھا جو ابتک لاپتہ ہیں، اگر انہوں نے کوئی جرم کیا ہے تو انہیں عدالتوں میں پیش کیا جائے ہم ایک کرب سے گزر رہے ہیں، مسلم عارف ایک نو عمر لڑکا ہے اور وہ جماعت نہم کے طالب علم ہیں انہیں لاپتہ کرنا آئین و قانون کی خلاف ورزی ہے لہذا اسے اور دیگر لاپتہ افراد کو رہا کیا جائے۔ انہوں نے کہاکہ بارہا فریاد کرنے کے باوجود ہماری شنوائی نہیں ہورہی ہے ہم نے مجبوراً بلیدہ زامران سے تربت تک لانگ مارچ کیا ہے لہذا ہمیں سنا جائے اور انصاف فراہم کیا جائے۔

حاصل فقیر داد کی بہن نے کہاکہ حاصل فقیر کو 2 ستمبر 2023 سے لاپتہ کیا گیا ہے اگر وہ قصور وار ہے تو انہیں عدالتوں میں پیش کرکے سزا دی جائے، ہم غیر قانونی مطالبہ نہیں کررہے ہیں، لیکن جبری طور پر لاپتہ کرنا ہمیں عذاب دینے کے علاوہ کچھ نہیں لہذا ہمیں انصاف فراہم کرکے ہمارے پیارے بازیاب کیے جائیں۔

بلیدہ سے لاپتہ جان محمد کی بیٹی نے کہاکہ انکے والد کو 2013 میں بلیدہ بٹ نادرا دفتر کے سامنے سے اٹھا کر لاپتہ کیا گیا تھا تب میری عمر ایک سال تھی لیکن ابھی تک میرے والد لاپتہ ہیں اور میری عمر 13 برس ہے، ابھی تک والد کی راہ تکتی رہتی ہوں لہذا ہمیں باپ کی شفقت سے محروم نہ کیا جائے اور ہمارے والد کو رہا کیا جائے۔

نوانو زامران سے لاپتہ شہزاد عبید اور داؤد عبدالوھاب کے چچا اور آل پارٹیز کیچ کے ترجمان یلان بلوچ نے کہاکہ شہزاد عبید اور داود عبدالوہاب دو کم عمر نوجوان ہیں انہیں 2 مئی 2024 کو لاپتہ کیا گیا تھا اس دوران ہم نے ضلعی انتظامیہ سمیت ہر امید کے دروازے پر دستک دی ہے لیکن کہیں سے کوئی مثبت جواب نہیں مل رہاہے، ہم نے مجبوراً اب احتجاج کی راہ لی ہے لہذا ہمارا مطالبہ ہیکہ ہمارے جتنے لواحقین ہیں ان سب کو سنا جائے اور انصاف فراہم کیا جائے جو لوگ لاپتہ ہیں انہیں رہا کیا جائے، لوگوں کو لاپتہ کرنے سے نفرتوں کا بیچ بو کر لوگوں کو ریاست سے متنفر  کرنے کا سلسلہ بند کیا جائے، کم عمر لڑکوں کو جبری طور پر اٹھانا آئین کی پاسداری اور ملک سے وفاداری نہیں، اگر ایک کم عمر لڑکا کسی چیز میں ملوث ہے یا اس پر شبہ ہے تو انکے والدین کو اسکا اطلاع دی جائے، کھیتوں اور گھروں سے لوگوں کو اٹھانا مسئلے کا حل نہیں۔

آپسر کے رہائشی فاروق سخیداد کی بہن، شےحق کہورخان کی والدہ ،ڈاکٹر رفیق کی فیملی و دیگر نے دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ہمارے پیاروں کو بازیاب کیا جائے جب تک ہمارے نوجوان لاپتہ ہیں ہم دھرنا دیکر بیٹھیں گے اور اس احتجاج میں مزید شدت لائیں گے۔

مقررین نے سیاسی و سماجی اور انسانی حقوق کی تنظیموں سے مطالبہ کیاکہ وہ دھرنے میں آکر ہمارے لیے صدا بلند کریں تاکہ ہمیں انصاف مل سکے۔

دھرنے میں بلیدہ زامران کے علاوہ ضلع کیچ کے دیگر علاقوں سے مختلف خاندانوں نے شمولیت اختیار کیا شامل ہیں جنکی تعداد اس وقت 10 سے زائد ہے۔ دھرنے سے اظہار یکجہتی کیلئے حق دو تحریک کے ضلعی صدر حاجی ناصر پلیزئی، مولانا نصیر احمد بلوچ، نوید نصیر، بی این پی کے صدیق ساگر ،دادجان رند سمیت دیگر  شریک تھے جبکہ بلوچ یکجہتی کمیٹی اور بی ایس او پجار نے بھی دھرنے کی حمایت کی ہے۔

گزشتہ مضمون
اگلا مضمون
متعلقہ مضامین

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

تازہ ترین