بدھ, مئی 22, 2024
spot_img
ہومبلوچستانبلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن مستونگ زون کا سینئر باڈی اجلاس، زونل آرگنائزنگ باڈی...

بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن مستونگ زون کا سینئر باڈی اجلاس، زونل آرگنائزنگ باڈی تشکیل دے دی گئی

بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن مستونگ زون کا سینیئر باڈی اجلاس، زونل آرگنائزنگ باڈی تشکیل دے دی گئی
بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن مستونگ زون کا سینیئر باڈی اجلاس زیرِ صدارت مرکزی کمیٹی کے رکن سراج بلوچ منعقد ہوا جبکہ مرکزی کمیٹی کے رکن فرید بلوچ بطورِ مہمان شرکت کیا

جلاس کا آغاز شہدائے بلوچستان و دنیا کے تمام محکوم انقلابیوں کی یاد میں دو منٹ کی خاموشی سے کیا گیا ۔اجلاس میں تعارفی نشست، علاقائی صورت حال، تنظیمی امور ،تنقید برائے تعمیر اور آگے کے لائحہ عمل کے ایجنڈاز زیرِ بحث رہے ۔

ساتھیوں نے شہیدفدا بلوچ کی 36 واں برسی کے موقع پر بات کرتے ہوئے کہا۔ کامریڈ شہید فدا بلوچ کی شہادت بلوچ قومی تحریک سے غداری کرنے اور تنظیم کو کمزور کرنے والی قوتوں کے خلاف ایک زندہ فلسفہ ہے۔ شہید وطن کامریڈ فدا بلوچ سوشلسٹ نظریات کے حامی وطن دوست رہبر لیڈر تھے۔ ان ہی ترقی پسند نظریات نے ان کو جلد تمام سیاسی حلقوں میں روشناس کرایا۔ انہوں نے بلوچ قومی تحریک کو مارکسی خطوط پر استوار کرنے کے لیے انتھک کوشش کی۔ اور اتحاد جدوجہد آخری فتح تک کادرس دیا۔ شہید فدا بلوچ کی جدوجہد نے بلوچ قومی تحریک کی ماضی کے تعصبات روایتی لیڈر شپ قبائلی اور دیگر دوسرے تمام گھناوجرائم سے پاک کر کے سائنسی خطوط پر استوار کیا۔ بلوچ قومی تحریک کودنیاکےجدیدمعاشی سیاسی اورسماجی نظریات سے ہم آہنگ کرنے میں شہید فدا بلوچ نے بنیادی کردارادا کیا۔ بلوچستان کی موجودہ سیاسی و معاشی اورسماجی صورت حال میں بی ایس او ہی اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔ آنے والے دنوں میں بلوچ قومی تحریک کو قیادت ڈھانچہ اور فکرو پروگرام لائحہ عمل اور حکمت عملی دینا بھی بی ایس او کے نوجوانوں کی قومی ذمہ داری ہے۔

اور ساتھیوں نے مباحثہ کو آگے بڑھاتے ہوئے عالمی و علاقاٸی تناظر پر گفتگو کرتے ہوئے ساتھیوں نے کہا کہ آج جہاں ایک طرف سامراجی قوتوں کی جانب سے محکوم اقوام پر بے مثال جبر کر کے انہیں اپنے قابو میں رکھنا اور ان کی تمام تر جمع پونجی سے اپنے بڑھتی ہوئی طاقت اور عالمی نقشے پر خود کو ایک طاقتور و با اثر قوت کے طور پر نمودار کرنا اور تمام تر پسماندہ اور پچھڑے ہوئے ممالک پر بے جا اپنی قبضہ گیریت میں وسعت پیدا کرنا آج کے اس عہد کی بحرانی کیفیت کا طاقتور اظہار ہے۔ سامراج کی اس بڑھتی ہوئی طاقت اور عالمی نقشے پر خود کو کسی بھی صورت میں طاقتور ترین ممالک کے طور پر ظاہر کرنا اور ہر طرح کے محکوموں کی بڑھتی ہوئی تحریکوں کو سبوتاژ کرنا محکوم اقوام کی لازوال انقلابی قربانیوں کو ملیامیٹ کرنے کے مترادف ہے

علاقاٸی صورتحال پر بات کرتے ہوٸے ساتھیوں نے کہا کہ عالمی محکوم اقوام و طبقات کے منظم ہونے کی جس طرح ضرورت ہے اسی طرح بلوچ قوم کو بھی سامراج و سفاک حاکم کے خلاف مشترکہ مزاحمت کے ساتھ ساتھ منظم ہونے کی اشد ضرورت ہے۔ سامراج کی سفاکیت کے حالیہ ادوار میں بلوچ نے خودرو تحاریک کی صورت میں بہترین مزاحمت دکھاٸی ہے مگر یہ اب بھی سیاسی محاز ابتداٸی شکل ہے۔ اس مزاحمت کو باقاعدہ سیاسی، سماجی، ثقافتی و قومی شکل و پروگرام دیکر منظم کرنا اس وقت بہت بڑا چیلنج ہےجسے بلوچ سیاسی قیادت کو عبور کرنا ہوگا۔ منظم و مضبوط عوامی تحریک کے بغیر جبر سے نجات ناممکن ہے۔

مزید تنظیمی امور پہ بات رکھتے ہوئے کہا کہ بی ایس او نے انتہاٸی سخت حالات میں بھی بلوچ کو اجتماعی بیانیہ دیتے ہوٸے سامراجی طاقتوں کے عزاٸم کو فاش کیا ہے اور اسی کے ساتھ مختلف رکاوٹوں اور دشواریوں کے باوجود تنظیم کو باقاعدہ بحال رکھا ہے۔ حال ہی تنظیم کا کامیاب کونسل سیشن اس کے مضبوطی کی دلیل ہے۔ بی ایس او نے بڑی کامیابی سے کیڈر سازی کا عمل جاری رکھا ہوا ہے، کسی بھی رش کش مقابلہ بازی سے بچتے ہوٸے انقلابی کیڈرز تراشنے کا عمل جاری ہے۔ گزشتہ قیادت ٹینیور میں جن اعلٰی تنظیمی و انقلابی معیارات و ثقافت کو ساتھیوں نے کامیابی سے حاصل کیا اسے برقرار رکھتے ہوٸے آگے بڑھنے میں ہی ہماری کامیابی ہے۔

آٸندہ کے لاٸحہ عمل میں بی ایس او مستونگ زون کی آرگناٸزنگ باڈی تشکیل دے دی گٸی جس میں عرفان بلوچ آرگناٸزر، ریاض بلوچ ڈپٹی آرگناٸزر، غلام علی بلوچ پریس سیکریٹری جب کہ اکرم بلوچ اور اورنگزیب بلوچ آرگناٸزنگ باڈی کے ممبر منتخب ہوٸے۔بعد ازاں آرگنائزنگ باڈی کے منتخب دوستوں سے مرکزی کمیٹی کے رکن سراج بلوچ نے حلف لے لیا اور اجلاس کا اختتام کیاگیا۔

متعلقہ مضامین

جواب چھوڑ دیں

براہ مہربانی اپنی رائے درج کریں!
اپنا نام یہاں درج کریں

تازہ ترین